270

آگ سے اب تک جنگل کا 35%فیصد حصہ جل چکا ہے اور اب آگ انسانی آبادی کی جانب بڑھ رہی ہے۔کوہ سلیمان رینج کے جنگلات دنیا کے سب سے بڑے اور پرانے چنگلات تصور کیے جاتے ہیں اور یہاں چلغوزہ اور زیتون کی سب سے بڑی پیدوار ہوتی ہے

ڈیرہ اسماعیل خان اور ڈسٹرکٹ شیرانی بارڈر کوہ سلیمان رینج میں آج غالبا 14 دن سے زیتون اور چلغوزے کے چنگلات کا آگ لگی ہوئی ہے۔ آگ کو بجانے کے لیے اپنی مدد آپ کے تحت اہل علاقہ نے آگ بجانے کی کوشش کی جس کی وجہ سے 4 بندے جھلس کر شہید ہوگئے جبکہ 7 افراد ابھی تک لاپتہ ہیں 5 افراد زخمی حالت میں ہسپتال منتقل کئے گئے ہیں جبکہ آگ سے اب تک جنگل کا 35%فیصد حصہ جل چکا ہے اور اب آگ انسانی آبادی کی جانب بڑھ رہی ہے۔کوہ سلیمان رینج کے جنگلات دنیا کے سب سے بڑے اور پرانے چنگلات تصور کیے جاتے ہیں اور یہاں چلغوزہ اور زیتون کی سب سے بڑی پیدوار ہوتی ہے اور یہاں سے چلغوزہ اور زیتون چائینہ بھی بھیجا جاتا ہے۔شیرانی قوم کا 39% فیصد زریعہ معاش چلغوزے اور زیتون کی کاشت سے وابسطہ ہے۔یہاں دنیا کے نایاب جانور جیسا کے مارخور ، سیاہ ریچھ ،برفانی تیندوہ ، چکور بھی پائے جاتے ہیں جن کی جانو کو بھی آگ نے اپنی لپیٹ میں لیا ہوا ہے۔آگ کی وجہ سے کوئٹہ سے ڈی آئی خان اور ژوب سے ڈی آئی خان روڈ بند پڑھی ہے۔
اس علاقے میں برن سینٹر اور ریسکیو کا عملہ نا ہونے کی وجہ سے شہریوں کو مزید مشکلات کا سامنا ہے۔احکام بالا اس پر جلد سے جلد نوٹس لے کر اس آگ کو بجانے کی کوشش کرے نہیں تو آنے والے چند دنوں میں جہاں چلغوزہ اور زیتون کے باغات معشیت کو مستحقم کرنے میں اپنا اہم کردار ادا کرتے تھے تو دوسری جانب چنگلات کے جھلس جانے کی وجہ سے موسم میں اہم تبدیلیاں بھی رہنما ہوگی اور ہم نایاب اور قومی جانور مارخور، چکور، سیاہ ریچھ ، برفانی تیندوہ جیسے قیمتی،نایاب اور قومی جانور سے بھی ہاتھ دھو بیٹھے گے اور اس کے ساتھ ساتھ پاکستان کے سب سے بڑے اور پرانے جنگل سے بھی محروم ہوجانگے ہمیں جلد ہی ہوش کے ناخن لینا ہونگے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں